حلیم عادل شیخ کے ساتھ جیل میں کیا ہوا؟ سی سی ٹی وی فوٹیج نے تہلکہ مچادیا

کراچی (کوہ نور نیوز) سندھ اسمبلی میں قائد حزب اختلاف حلیم عادل شیخ پر مبینہ تشدد کے الزامات کے بعد سنٹرل جیل کراچی کی انتظامیہ نے سی سی ٹی وی فوٹیج جاری کردی۔ ویڈیو میں دیکھا جاسکتا ہے کہ حلیم عادل شیخ جیل پولیس کے اہلکاروں کے ہمراہ جیل میں داخل ہوئے اور چند ہی سیکنڈ بعد اہلکاروں کے ہمراہ واپس بھاگتے ہوئے نظر آئے۔ نجی ٹی وی نے ذرائع کے حوالے سے دعویٰ کیا ہے کہ جیل میں بعض قیدیوں نے حلیم عادل شیخ پر ہاتھ اٹھایا لیکن حالات خراب ہونے سے پہلے ہی انہیں اہلکاروں نے بحفاظت وہاں سے نکال لیا۔ جیل میں حلیم عادل شیخ اور وزیر اعظم عمران خان کے خلاف نعرے بازی بھی کی گئی۔ دوسری جانب سندھ حکومت کے ترجمان مرتضیٰ وہاب نے حلیم عادل شیخ کے معاملے پر بلائی گئی پریس کانفرنس کے دوران بھی یہ ویڈیو چلائی۔ انہوں نے کہا کہ حلیم عادل شیخ ہشاش بشاش داخل ہوئے اور چھ سیکنڈ کے بعد بھاگتے ہوئے واپس آ رہے ہیں، یعنی اتنے سے وقت میں 50 غنڈوں نے انہیں مار بھی لیا، ان کا مقصد سندھ حکومت کو الزام تراشی کا نشانہ بنا کر ہسپتال جانا تھا۔ مرتضیٰ وہاب نے کہا کہ حلیم عادل شیخ وکٹری کا نشان بناتے ہوئے نظر آئے، اس کا مطلب ہے کہ وہ کہہ رہے ہیں کہ وہ ہسپتال پہنچنے میں کامیاب ہوگئے ہیں اور یہی ان کی کامیابی ہے۔ اس سارے معاملے میں سندھ حکومت نے یہ زیادتی کی ہے کہ ہسپتال میں انہیں ان کے کولیگز اور دوست احباب کو ملنے دیا جا رہا ہے۔