اسلام آباد ہائی کورٹ کا قبائلی اضلاع میں تھری اور فورجی سروسز کی بحالی پر وفاق سے جواب طلب

اسلام آباد: (کوہ نور نیوز) اسلام آباد ہائی کورٹ نے قبائلی اضلاع میں انٹرنیٹ کی تھری جی اور فور جی سروسز بحال کرنے کی درخواست پر وفاق سے ایک ہفتے میں جواب طلب کر لیا ہے۔ چیف جسٹس اطہر من اللہ نے قبائلی اضلاع میں انٹرنیٹ کی تھری جی اور فور جی سروسز بحال کرنے کی درخواست پر سماعت کی۔ درخواست گزار کے وکیل نے کہا 2016 سے قبائلی علاقوں میں انٹرنیٹ سروسز بند ہیں، چھ ماہ سے پٹیشن بھی زیر التوا ہے ، ابھی تک کچھ نہیں کیا جا سکا۔ عدالت وزارت داخلہ کو حکم دے کہ وہ سروس بحال کریں۔ چیف جسٹس نے کہا سابقہ فاٹا کے یہ تمام اضلاع اب خیبرپختونخواہ کا حصہ بن چکے ہیں،صوبائی حکومت کو یہ عدالت کوئی حکم نہیں دے سکتی۔ اس ملک میں پارلیمنٹ ہے منتخب حکومت ہے۔ یہ سیاسی فورم نہیں ہے عدالت نہیں جانتی کہ کیوں وہ اجازت نہیں دے رہے؟. ڈپٹی اٹارنی جنرل نے اعتراض اٹھایا کہ پٹیشنر کے ایڈریس تو اسلام آباد کے ہیں، ان کو تو یہ سہولت دستیاب ہے جس پر چیف جسٹس نے کہا سب برابر کے شہری ہیں ایسی بات نہ کریں ،گاؤں میں بھی سہولت ملنا اُن کا حق ہے۔