عثمان میرے ساتھ نکاح کرنا چاہتا تھا، میرا اس کیساتھ تعلق 2سال سے تھا، عظمیٰ خان

لاہور: (کوہ نور نیوز) اداکارہ عظمیٰ خان نے گزشتہ روز اپنی تشدد والی ویڈیو وائرل ہونے کے بعد اب پریس کانفرنس کی ہے جس میں انہوں نے بتایا ہے کہ عثمان میرے ساتھ نکاح کرنا چاہتا تھا، میرا اس کیساتھ تعلق 2سال سے تھا۔ بات کرتے ہوئے انہوں نے بتایا ہے کہ میں نے 5 مہینے پہلے عثمان سے شادی کرنے سے انکار کر دیا تھا جس کے بعد وہ پرانے تعلق کی بنیاد پر ملاقات کیا کرتا تھا۔ مزید بات کرتے ہوئے عظمیٰ خان کی جانب سے بتایا گیا ہے کہ چاند رات سے قبل میں عثمان کی بیوی کو کبھی نہیں ملی، اسی دن میں نے ان کو دیکھا تھا۔ پریس کانفرنس میں سوال پر عظمیٰ خان کا کہنا تھا کہ میں نے عثمان کی بیوی سے معافی صرف اس لئے مانگی تھی کیونکہ انہوں نے میرے اوپر پستول رکھی ہوئی تھی، میری جان کو خطرہ تھا، صرف اس لئے معافی مانگی تھی۔ اس کے علاوہ عظمیٰ خان نے انکشاف کیا ہے کہ عثمان کی بیوی نے کچھی مجھ سے رابطہ نہیں کیا اور نہ ہی کبھی کسی قسم کی دھمکی دی تھی۔ عظمیٰ خان نے حال کی بات کرتے ہوئے یہ بھی بتایا ہے کہ عثمان ملک اسے ابھی تک کالز اور میسجز بھیج رہا ہے، اداکارہ نے کہا ہے کہ میں عدالت میں اس موضوع کو لے کر جاوں گی کہ وہ کس حیثیت سے مجھ سے ابھی تک رابطہ کر رہا ہے۔ اس کے علاوہ پریس کانفرنس میں بات کرتے ہوئے وکیل عظمیٰ خان نے یہ بھی انکشاف کیا ہے کہ عثمان کے گھر والون کو اس تعلق اور شادی کی پیشکش کے بارے میں دسمبر 2019 سے علم تھا۔ اسی وقت عظمیٰ خان نے شادی کرنے سے انکار کر دیا تھا۔ یاد رہے کہ کل سے عظمیٰ خان کی ویڈیو وائرل ہونے کے بعد دونوں فریقین کی جانب سے ویڈیوز کا سلسلہ جاری ہے۔ اس سے قبل عثمان کی بیوی آمنہ عثمان نے اس بات کا بھی اعلان کر دیا ہے کہ انہوں نے اپنے شوہر سے طلاق لے لی ہے جبکہ آمنہ عثمان نے اس بات کا بھی اعلان کیا تھا کہ ان کے شوہر کا ملک ریاض سے کسی قسم کا کوئی تعلق نہیں ہے۔ تا ہم اب ادکارہ نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے بتایا ہے کہ عثمان میرے ساتھ نکاح کرنا چاہتا تھا، میرا اس کیساتھ تعلق 2سال سے تھا۔ بات کرتے ہوئے انہوں نے بتایا ہے کہ میں نے 5 مہینے پہلے عثمان سے شادی کرنے سے انکار کر دیا تھا جس کے بعد وہ پرانے تعلق کی بنیاد پر ملاقات کیا کرتا تھا۔ اس کے علاوہ آمنہ عثمان کے الزامات کی بھی تردید کر دی گئی ہے کہ جس گھر پر ان کی جانب سے حملہ کیا گیا، وہ عثمان کا نہیں بلکہ عظمیٰ خان کا ہے، وہ وہاں کافی لمبے عرصے سے رہ رہی تھیں۔ اس موقع پر بات کرتے ہوئے وکیل کا کہنا ہے کہ نامعلوم افراد گھر باہر آتے ہیں ، ہمیں فوری طور پر سیکیورٹی دی جائے ۔ دوسرا مطالبہ ہے کہ معاملے کی انکوائری ڈی آئی جی کی ذاتی سربراہی میں ہو، تیسرا مطالبہ یہ ہے کہ ملزموں کی گرفتاری کو فوری طور پر عمل میں لایا جائے ، ملزموں کے بااثر ہونے کا تاثر نہ دیا جائے۔