گھریلو اشیا کو حیرت انگیز طور پر متوازن کرنے والا فلسطینی نوجوان

غزہ: (کوہ نور نیوز) فلسطینی نوجوان محمد الشنبری ایک جانب تو تن ساز ہیں لیکن جب بھی وہ کوئی نئی شے دیکھتے ہیں وہ اس کے توازن کے مقام (بیلنسنگ پوائنٹ) کو تلاش کرتے ہیں کیونکہ وہ چیزوں کو ایک کے اوپر ایک رکھنے کے ماہر ہیں۔ بھوک ، افلاس اور شورش کے شکار غزہ میں رہنے والے الشنبری کہتے ہیں کہ انہوں نے اپنی محنت سے یہ فن سیکھا ہےجس میں جسم و دماغ دونوں کا ہی استعمال کیا جاتا ہے۔ وہ بھاری بھرکم اشیا کو نہایت کامیابی سے ایک دوسرے کے اوپر اس طرح سے رکھتے ہیں کہ وہ مقناطیس سے چپکے ہوئے معلوم ہوتے ہیں۔ اسی فن نے انہیں فلسطین کی ایک مشہور شخصیت بنادیا ہے۔ اپنے فن سے وہ لوگوں کی مایوسی دور کرنے اور انہیں امید دلانے کا کام بھی کرتے ہیں۔ کرسی کے ایک پائے پر وہ گیس کے دو سلنڈر متوازن کرسکتے ہیں جو ایک حیرت انگیز صلاحیت ہے یہاں تک کہ شیشے کی عام بوتل پر پورا ٹی وی رکھنا ان کے بائیں ہاتھ کا کھیل ہے۔ الشنبری نے بتایا کہ ’ سب سے مشکل کام درست مقام کا درست سہارا (فلکرم) تلاش کرنا ہوتا ہے اور بس‘ ۔ شعبدے بازوں کے بارے میں مشہور ہے کہ وہ اپنے ہاتھوں کے اشارے سے لوگوں کو حیران کردیتے ہیں تاہم گزشتہ اکتوبر میں غزہ میں ہونے والے ایک میلے کے دوران انہوں نے اپنی حقیقی مہارت سے خود شعبدے بازوں کو بھی حیران کردیا۔ محمد الشنبری باڈی بلڈر ہیں اور اسی کی تربیت بھی دیتے ہیں۔ اپنے اس سفر میں انہوں نے دریافت کیا کہ ورزش کے دوران دھیرے دھیرے ان میں ارتکاز یا فوکس کی صلاحیت پیدا ہوئی جس کے بغیر ان اشیا کو ایک دوسرے پر نہیں رکھا جاسکتا۔