ریاست مدینہ میں کھاتے دار کو 1 پیسے کا پے آرڈر موصول

لاہور: (کوہ نور نیوز) پاکستان تحریک انصاف کی ریاست مدینہ طرز کی حکومت کا اثر ہے یا کچھ اور؟ کہ کراچی کے ایک بینک نے ایک سال قبل ختم کیے گئے اکاؤنٹ کے مالک محمد افضل کو ایک پیسے کا پے آرڈر گھر پر پہنچا دیا۔ تفصیلات کے مطابق اس دستاویز کی تیاری، ترسیل اور کوریئر سروس کے کھاتہ دار کے گھر تک دستخط کے ساتھ ڈلیوری پر بینک کے 400 روپے سے زائد کے اخراجات آئے ہیں، یہ رقم کہاں سے آئی؟ ان معلومات کے حصول کے سلسلے میں کھاتہ دار کی جانب سے تحقیقات پر بھی اتنے ہی اخراجات آچکے ہیں۔ بینک الفلاح کی پی آئی ڈی سی پر واقع بیومنٹ پلازہ برانچ کے ایک کھاتے دار نے ایک سال پہلے اپنا اکاؤنٹ بند کرا دیا تھا، بینک کی جانب سے رواں سال 9 مئی کو اکاؤنٹ کلوزنگ کا خط کھاتے میں موجود تمام بقایاجات 199 روپے 88 پیسے کے پے آرڈر کے ساتھ موصول ہوا۔ 18 اکتوبر کو اسی بینک کی جانب سے بند کرائے گئے اکاؤنٹ کے حوالے سے ملنے والے ایک اور پے آرڈر نے کھاتے دار کو حیرت زدہ کردیا، وجہ حیرت بند اکاؤنٹ کا ایک اور پے آرڈر پر نہیں بلکہ اس میں درج رقم بنی، بینک کی جانب سے کھاتے دار کو جو رقم واپس کی گئی ہے وہ صرف ایک پیسہ ہے۔ اس سلسلے میں رابطہ کرنے پر بینک انتظامیہ یہ بتانے سے قاصر ہے کہ یہ رقم اکاؤنٹ ہولڈر کے حصے میں کس مد سے آئی، ایک سادہ سا حساب کتاب کریں تو ریاست مدینہ کی یاد تازہ ہوجاتی ہے کہ اُس دور میں حکومت یا کوئی اور کسی شخص کی ایک پائی بھی سلب نہیں کرسکتے تھے اور یہی کچھ آج بینک الفلاح کی انتظامیہ نے کر دکھایا ، خواہ اس سلسلے میں بینک انتظامیہ کے کتنے بھی اخراجات آئے ہوں۔ بینک کی جانب سے اس پے آرڈر کی تیاری اس کی ترسیل اور کوریئر سروس کے ذریعے رجسٹرڈ وصولی پر 400 روپے سے زائد کے اخراجات آئے ہیں جبکہ کھاتا دار کے اس سلسلے میں تحقیقات کے لیے بینک آنے جانے کے حساب کتاب بھی اس کے مساوی بنتا ہے۔