اسپین: سیاسی رہنماؤں کے فون ہیک کرنے پر خفیہ ایجنسیوں پر عدالتی کنٹرول سخت کرنےکا فیصلہ

میڈرڈ: (کوہ نورنیوز،ویب ڈیسک) اسپین کی حکومت نے وزیراعظم، وزیر دفاع، سیکورٹی عہدے داروں اور چوٹی کے سیاست دانوں کے فون ہیک کرنے پر خفیہ ایجنسیوں پر عدالتی کنٹرول سخت کرنےکا فیصلہ کیا ہے۔ غیر ملکی میڈیا کے مطابق ہسپانوی وزیراعظم نے خفیہ معلومات کو کنٹرول کرنےکا نیا قانون لانےکا اعلان کیا ہے۔ اسپین کی حکومت پچھلے مہینے ہیکنگ اسکینڈل پر انٹیلی جنس ایجنسی کی خاتون سربراہ کو برطرف بھی کرچکی ہے۔ ان پر وزیراعظم، وزیردفاع اور دیگر سیاستدانوں کے موبائل فون کی ہیکنگ کے لیے اسرائیل کا بنا ہوا پیگاسس سافٹ ویئر استعمال کرنےکا الزام تھا۔ گزشتہ ماہ کینیڈا میں قائم انٹرنیٹ اور سائبر سکیورٹی کے نگران ادارے سٹیزن لیب نے انکشاف کیا تھا کہ اسپین کی ریاست کاتالونیہ کے 60 علیحدگی پسند رہنماؤں اور ان کے خاندان کے افراد کی اسرائیلی ٹیکنالوجی کمپنی 'این ایس او' کی جانب سے بنائے گئے جاسوسی سافٹ ویئر 'پیگاسس‘ کے ذریعے جاسوسی کی گئی۔ اس کے علاوہ ہسپانوی وزیراعظم اور وزیردفاع کے فونز کو بھی 'پیگاسس‘ کے ذریعے نشانہ بنائے جانے کا انکشاف کیا گیا تھا۔ ان انکشافات کے بعد ہسپانوی حکومت پر اتحادیوں کی جانب سے تحقیقات کیلئے شدید دباؤ تھا ۔