عدلیہ اور فوج کو مل بیٹھ کر مسائل کا مستقل حل نکالنا چاہئے: چودھری شجاعت

لاہور: (کوہ نورنیوز) پاکستان مسلم لیگ(ق) کے سربراہ اور سابق وزیراعظم چودھری شجاعت حسین نے ملک کی کشیدہ صورتحال پر سخت ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ ملک کے اندر جو موجودہ حالات ہیں اس طرح کے حالات پہلے کبھی نہیں دیکھے، ایسی سنگین صورتحال میں پاکستان کے دو بڑے سلامتی کے ضامن ادارے عدلیہ اور فوج کو مل بیٹھ کر ان مسائل کا مستقل حل نکالنا چاہئے۔ اپنے بیان میں چودھری شجاعت حسین نے کہا کہ حکومتی طاقتیں اور سیاسی جماعتیں جس طرف جا رہی ہیں اس سے ملک میں افراتفری اور لاقانونیت بڑھے گی، پاکستان کے معاشی حالات انتہائی سنگین ہو گئے ہیں، بڑھتی قیمتوں سے عام آدمی کا جینا تو پہلے ہی مشکل ہے، یہ نہ ہو خدانخواستہ مرنا بھی مشکل ہو جائے، سارا ملک بند ہونے کی وجہ سے اشیاء خورونوش کی شدید کمی کا خدشہ ہے، آمدورفت کا نظام مکمل طور پر مفلوج ہے، ایمبولینس تک کو راستہ میسر نہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ لوگ جنازوں کو لے کر پیدل جانے پر مجبور ہیں، عالمی سطح پر پاکستان کی صورتحال کو غور سے دیکھا جا رہا ہے، سانحہ ماڈل ٹاؤن کی تاریخ دوبارہ نہ دہرائی جائے، پولیس کو چاہئے کہ وہ شیلنگ بند کرے، شیلنگ کی وجہ سے گلیوں، محلوں میں رہنے والے بھی اذیت کا شکار ہیں۔ سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ پولیس عام آدمی کو تحفظ اور رکاوٹوں کی وجہ سے ایمبولینس اور جنازوں کو نکالنے کا راستہ فراہم کرے، جو بھی قافلے گزریں یا جائیں گجرات کے پارٹی رہنما ان کیلئے پانی اور کھانے کا انتظام کریں، ملک بند ہونے کی وجہ سے اشیائے خورونوش کی کمی کا خدشہ ہے، عالمی سطح پر پاکستان کی صورتحال کوغور سے دیکھا جا رہا ہے۔