وزیراعلیٰ پنجاب نے کرتار پور میں گوردوارہ میں ماڈلنگ کے واقعے کا نوٹس لے لیا

لاہور: (کوہ نورنیوز) وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے کرتار پور میں گوردوارہ کے احاطے میں ماڈلنگ کے واقعے کا نوٹس لے لیا۔ وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے سکھوں کے مذہبی مقام کرتارپور گوردوارہ کے احاطے میں ماڈلنگ کے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے چیف سیکرٹری سے رپورٹ طلب کرتے ہوئے واقعے کی انکوائری کا حکم دیا ہے۔ اس حوالے سے عثمان بزدار کا کہنا تھا کہ ماڈلنگ کی اجازت دینے والے عملے کے خلاف کارروائی کی جائے۔ پاکستان میں بسنے والی ہر اقلیتی برادری کے جذبات کا احترام کرتے ہیں، واقعےسےسکھ برادری کےجذبات مجروح ہونےپردکھ ہے، ذمہ داروں کے خلاف نہ صرف کارروائی ہوگی بلکہ ہوتی ہوئی نظربھی آئے گی۔ اس سے قبل سکھوں کے مذہبی مقام کرتارپور صاحب کے احاطے میں ماڈلنگ پر وزیراطلاعات فواد چودھری کی تنقید کی تھی۔ فواد چودھری نے ڈیزائنر اور ماڈل سے سکھ برادری سے معافی مانگنے کا مطالبہ کیا اور کہا کہ کرتار پور کوئی فلم سیٹ نہیں، ایک مذہبی مقام ہے۔ دوسری طرف فیشن برانڈ ’منت کلاتھنگ‘ نے معذرت کرتے ہوئے تصاویر سوشل میڈیا اکاؤنٹ سے ہٹا لی ہیں۔ ایک انسٹاگرام پوسٹ میں کمپنی نے وضاحت کی کہ جو تصاویر ہمارے سوشل میڈیا اکاؤنٹس پر لگائی گئی ہیں وہ کسی شوٹ کا حصہ نہیں۔ یہ تصاویر ہمیں ایک تھرڈ پارٹی (بلاگر) کی جانب سے مہیا کی گئیں تھیں جن میں وہ ہمارے ملبوسات پہنے ہوئے تھیں۔ تاہم فیشن برانڈ کا کہنا ہے کہ وہ اپنی غلطی تسلیم کرتے ہیں کہ انہیں یہ مواد پوسٹ نہیں کرنا چاہیے تھا اور ہم معذرت چاہتے ہیں ہر اس شخص سے جس کی دل آزاری ہوئی ہے۔ تمام مذہبی مقامات ہمارے لیے مقدس ہیں۔